دل میں جو بات کھٹکتی ہے دہن تک پہنچے

کمال احمد صدیقی

دل میں جو بات کھٹکتی ہے دہن تک پہنچے

کمال احمد صدیقی

MORE BYکمال احمد صدیقی

    دل میں جو بات کھٹکتی ہے دہن تک پہنچے

    خامشی مرحلۂ عرض سخن تک پہنچے

    محرم حسن بہاراں تو نہیں ہو سکتی

    وہ نظر صرف جو گل ہائے چمن تک پہنچے

    زندگی نام اسی موج مے ناب کا ہے

    مے کدے سے جو اٹھے دار و رسن تک پہنچے

    گلستانوں کا اجارہ نہیں فصل گل پر

    فصل گل وہ ہے جو ہر دشت و دمن تک پہنچے

    عہد ہم نے بھی کیا تھا نہ ملیں گے اس سے

    بارہا ہم بھی اسی عہد شکن تک پہنچے

    بات کرتا ہے بظاہر بڑی سادہ سی کمالؔ

    جو سخن ور ہیں وہی اس کے سخن تک پہنچے

    مأخذ :
    • کتاب : Aazadi ke baad dehli men urdu gazal (Pg. 297)
    • Author : Professor Unwan Chishti
    • مطبع : Asila Offset Printers, Kalan Mahal, Dariyaganj, New Delhi-6 (1989)
    • اشاعت : 1989

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY