امتحاں کے لیے جفا کب تک

مومن خاں مومن

امتحاں کے لیے جفا کب تک

مومن خاں مومن

MORE BY مومن خاں مومن

    امتحاں کے لیے جفا کب تک

    التفات ستم نما کب تک

    غیر ہے بے وفا پہ تم تو کہو

    ہے ارادہ نباہ کا کب تک

    جرم معلوم ہے زلیخا کا

    طعنۂ دست نارسا کب تک

    مجھ پہ عاشق نہیں ہے کچھ ظالم

    صبر آخر کرے وفا کب تک

    دیکھیے خاک میں ملاتی ہے

    نگہ چشم سرمہ سا کب تک

    کہیں آنکھیں دکھا چکو مجھ کو

    جانب غیر دیکھنا کب تک

    نہ ملائیں گے وہ نہ آئیں گے

    جوش لبیک و مرحبا کب تک

    ہوش میں آ تو مجھ میں جان نہیں

    غفلت جرأت آزما کب تک

    لے شب وصل غیر بھی کاٹی

    تو مجھے آزمائے گا کب تک

    تم کو خو ہو گئی برائی کی

    درگزر کیجیئے بھلا کب تک

    مر چلے اب تو اس صنم سے ملیں

    مومنؔ اندیشۂ خدا کب تک

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY