خموشی انگلیاں چٹخا رہی ہے

ناصر کاظمی

خموشی انگلیاں چٹخا رہی ہے

ناصر کاظمی

MORE BY ناصر کاظمی

    خموشی انگلیاں چٹخا رہی ہے

    تری آواز اب تک آ رہی ہے

    دل وحشی لیے جاتا ہے لیکن

    ہوا زنجیر سی پہنا رہی ہے

    ترے شہر طرب کی رونقوں میں

    طبیعت اور بھی گھبرا رہی ہے

    کرم اے صرصر آلام دوراں

    دلوں کی آگ بجھتی جا رہی ہے

    کڑے کوسوں کے سناٹے ہیں لیکن

    تری آواز اب تک آ رہی ہے

    طناب خیمۂ گل تھام ناصرؔ

    کوئی آندھی افق سے آ رہی ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    خموشی انگلیاں چٹخا رہی ہے نعمان شوق

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY