میں شادؔ تنہا اک طرف اور دنیا کی دنیا اک طرف

شاد عظیم آبادی

میں شادؔ تنہا اک طرف اور دنیا کی دنیا اک طرف

شاد عظیم آبادی

MORE BY شاد عظیم آبادی

    میں شادؔ تنہا اک طرف اور دنیا کی دنیا اک طرف

    سارا سمندر اک طرف آنسو کا قطرہ اک طرف

    اس آفت جاں کو بھی چہرہ تو دکھانا ہی نہ تھا

    اک سمت عیسیٰ دم بخود غش میں ہے موسیٰ اک طرف

    اپنے سمند ناز کو اے شہسوار آ چھیڑ کر

    صف بستہ حاضر کب سے ہیں محو تماشا اک طرف

    ساقی بغیر احوال یہ پہنچا ہے مے خانہ کا اب

    جام اک طرف ہے سرنگوں خالی ہے مینا اک طرف

    فرقت میں سب اچھے رہے دل کا مگر یہ حال ہے

    زخم اک طرف بڑھتا گیا داغ سویدا اک طرف

    دیدار جاناں کا بھلا کیوں کر تحمل ہو سکے

    ترچھی نگاہیں ایک سو زلف چلیپا اک طرف

    وہ تیغ لے کے کہتے ہیں دیکھوں تو حق پر کون ہے

    میں اک طرف شادؔ اک طرف سارا زمانہ اک طرف

    مآخذ:

    • Book: Dewan-e-shad Azimabadi (Pg. 203)
    • Author: Shad Azimabadi
    • مطبع: Educational Publishing House (2005)
    • اشاعت: 2005

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites