پیہم موج امکانی میں

راجیندر منچندا بانی

پیہم موج امکانی میں

راجیندر منچندا بانی

MORE BYراجیندر منچندا بانی

    پیہم موج امکانی میں

    اگلا پاؤں نئے پانی میں

    صف شفق سے مرے بستر تک

    ساتوں رنگ فراوانی میں

    بدن وصال آہنگ ہوا سا

    قبا عجیب پریشانی میں

    کیا سالم پہچان ہے اس کی

    وہ کہ نہیں اپنے ثانی میں

    ٹوک کے جانے کیا کہتا وہ

    اس نے سنا سب بے دھیانی میں

    یاد تری جیسے کہ سر شام

    دھند اتر جائے پانی میں

    خود سے کبھی مل لیتا ہوں میں

    سناٹے میں ویرانی میں

    آخر سوچا دیکھ ہی لیجے

    کیا کرتا ہے وہ من مانی میں

    ایک دیا آکاش میں بانیؔ

    ایک چراغ سا پیشانی میں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق,

    نعمان شوق

    پیہم موج امکانی میں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے