سکوت شب سے اک نغمہ سنا ہے

اطہر نفیس

سکوت شب سے اک نغمہ سنا ہے

اطہر نفیس

MORE BYاطہر نفیس

    سکوت شب سے اک نغمہ سنا ہے

    وہی کانوں میں اب تک گونجتا ہے

    غنیمت ہے کہ اپنے غمزدوں کو

    وہ حسن خود نگر پہچانتا ہے

    جسے کھو کر بہت مغموم ہوں میں

    سنا ہے اس کا غم مجھ سے سوا ہے

    کچھ ایسے غم بھی ہیں جن سے ابھی تک

    دل غم آشنا نا آشنا ہے

    بہت چھوٹے ہیں مجھ سے میرے دشمن

    جو میرا دوست ہے مجھ سے بڑا ہے

    مجھے ہر آن کچھ بننا پڑے گا

    مری ہر سانس میری ابتدا ہے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    امانت علی خان

    امانت علی خان

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    سکوت شب سے اک نغمہ سنا ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY