یہ کون خواب میں چھو کر چلا گیا مرے لب

احمد مشتاق

یہ کون خواب میں چھو کر چلا گیا مرے لب

احمد مشتاق

MORE BYاحمد مشتاق

    یہ کون خواب میں چھو کر چلا گیا مرے لب

    پکارتا ہوں تو دیتے نہیں صدا مرے لب

    یہ اور بات کسی کے لبوں تلک نہ گئے

    مگر قریب سے گزرے ہیں بارہا مرے لب

    اب اس کی شکل بھی مشکل سے یاد آتی ہے

    وہ جس کے نام سے ہوتے نہ تھے جدا مرے لب

    اب ایک عمر سے گفت و شنید بھی تو نہیں

    ہیں بے نصیب مرے کان بے نوا مرے لب

    یہ شاخسانۂ وہم و گمان تھا شاید

    کجا وہ ثمرۂ باغ طلب کجا مرے لب

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    یہ کون خواب میں چھو کر چلا گیا مرے لب نعمان شوق

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY