آنکھ تمہاری مست بھی ہے اور مستی کا پیمانہ بھی

ساغر نظامی

آنکھ تمہاری مست بھی ہے اور مستی کا پیمانہ بھی

ساغر نظامی

MORE BYساغر نظامی

    آنکھ تمہاری مست بھی ہے اور مستی کا پیمانہ بھی

    ایک چھلکتے ساغر میں مے بھی ہے مے خانہ بھی

    بے خودیٔ دل کا کیا کہنا سب کچھ ہے اور کچھ بھی نہیں

    ہستی سے مانوس بھی ہوں ہستی سے بیگانہ بھی

    حسن نے تیرے دنیا میں کیسی آگ لگا دی ہے

    برق بھی شعلہ برپا ہے رقص میں ہے پروانہ بھی

    وسعت وحشت تنگ ہوئی بگڑا گھر دیوانوں کا

    نجد کے اک سودائی نے لوٹ لیا ویرانہ بھی

    آج محبت رسوا ہے ہاتھوں سے ہوشیاروں کے

    عشق کی پہلی دنیا میں تھا کوئی دیوانہ بھی

    دل کی دنیا ہلتی ہے روکو اپنی نظروں کو

    کافر لوٹے لیتی ہیں آج تجلی خانہ بھی

    گردش مست نگاہوں کی آخر وجد انگیز ہوئی

    چکر میں ساغرؔ بھی ہے دور میں ہے پیمانہ بھی

    مأخذ :
    • کتاب : Karwaan-e-Ghazal (Pg. 102)
    • Author : Farooq Argali
    • مطبع : Farid Book Depot (Pvt.) Ltd (2004)
    • اشاعت : 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY