دن چھوٹا ہے رات بڑی ہے

شاہین

دن چھوٹا ہے رات بڑی ہے

شاہین

MORE BY شاہین

    دن چھوٹا ہے رات بڑی ہے

    مہلت کم اور شرط کڑی ہے

    اس کا اشارہ پا کر مر جا

    جینے کو اک عمر پڑی ہے

    بند نہیں سارے دروازے

    خیر سے بستی بہت بڑی ہے

    خوش ہیں مکیں اب دونوں طرف کے

    بیچ میں اک دیوار کھڑی ہے

    جاگ رہی ہے ساری بستی

    اور گلی سنسان پڑی ہے

    ہر پل چھوٹی ہوتی دنیا

    پہلے سے اب بہت بڑی ہے

    دل میں چبھن ہے ہاتھ میں لیکن

    نازک سی پھولوں کی چھڑی ہے

    صحرا کر دیا جس نے دل کو

    ساون کی یہ وہی جھڑی ہے

    جمع ہوئے سب دکھ کے مارے

    جنت کی بنیاد پڑی ہے

    ایک دیا ہے طاق میں شاہینؔ

    اور سرہانے رات کھڑی ہے

    0
    COMMENT
    COMMENTS
    VIEW COMMENTS

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Favroite added successfully

    Favroite removed successfully