احمد ندیم قاسمی

جانے کہاں تھے اور چلے تھے کہاں سے ہم

احمد ندیم قاسمی

MORE BY احمد ندیم قاسمی

    جانے کہاں تھے اور چلے تھے کہاں سے ہم

    بیدار ہو گئے کسی خواب گراں سے ہم

    اے نو بہار ناز تری نکہتوں کی خیر

    دامن جھٹک کے نکلے ترے گلستاں سے ہم

    پندار عاشقی کی امانت ہے آہ سرد

    یہ تیر آج چھوڑ رہے ہیں کماں سے ہم

    آؤ غبار راہ میں ڈھونڈیں شمیم ناز

    آؤ خبر بہار کی پوچھیں خزاں سے ہم

    آخر دعا کریں بھی تو کس مدعا کے ساتھ

    کیسے زمیں کی بات کہیں آسماں سے ہم

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    جانے کہاں تھے اور چلے تھے کہاں سے ہم نعمان شوق

    0
    COMMENT
    COMMENTS
    VIEW COMMENTS

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Favroite added successfully

    Favroite removed successfully