ختم ہر اچھا برا ہو جائے گا

انور شعور

ختم ہر اچھا برا ہو جائے گا

انور شعور

MORE BYانور شعور

    ختم ہر اچھا برا ہو جائے گا

    ایک دن سب کچھ فنا ہو جائے گا

    کیا پتا تھا دیکھنا اس کی طرف

    حادثہ اتنا بڑا ہو جائے گا

    مدتوں سے بند دروازہ کوئی

    دستکیں دینے سے وا ہو جائے گا

    ہے ابھی تک اس کے آنے کا یقین

    جیسے کوئی معجزہ ہو جائے گا

    مسکرا کر دیکھ لیتے ہو مجھے

    اس طرح کیا حق ادا ہو جائے گا

    کاش ہو جاؤ مرے ہمراہ تم

    ورنہ کوئی دوسرا ہو جائے گا

    کل کا وعدہ اور اس بحران میں؟

    جانے کل دنیا میں کیا ہو جائے گا

    رنگ لائے گا شہیدوں کا لہو

    ظلم جب حد سے سوا ہو جائے گا

    آپ کا کچھ بھی نہ جائے گا شعورؔ

    ہم غریبوں کا بھلا ہو جائے گا

    مأخذ :
    • کتاب : Andokhta (Pg. 91)
    • Author : Anwar Shuoor
    • مطبع : Arts Council of Pakistan, Karachi (2007)
    • اشاعت : 2007

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY