زمانہ ہے کہ گزرا جا رہا ہے

جلیل مانک پوری

زمانہ ہے کہ گزرا جا رہا ہے

جلیل مانک پوری

MORE BYجلیل مانک پوری

    زمانہ ہے کہ گزرا جا رہا ہے

    یہ دریا ہے کہ بہتا جا رہا ہے

    وہ اٹھے درد اٹھا حشر اٹھا

    مگر دل ہے کہ بیٹھا جا رہا ہے

    لگی تھی ان کے قدموں سے قیامت

    میں سمجھا ساتھ سایا جا رہا ہے

    زمانے پر ہنسے کوئی کہ روئے

    جو ہونا ہے وہ ہوتا جا رہا ہے

    مرے داغ جگر کو پھول کہہ کر

    مجھے کانٹوں میں کھینچا جا رہا ہے

    بہار آئی کہ دن ہولی کے آئے

    گلوں میں رنگ کھیلا جا رہا ہے

    رواں ہے عمر اور انسان غافل

    مسافر ہے کہ سوتا جا رہا ہے

    سر میت ہے یہ عبرت کا نوحہ

    محبت کا جنازہ جا رہا ہے

    جلیلؔ اب دل کو اپنا دل نہ سمجھو

    کوئی کر کے اشارا جا رہا ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Kainat-e-Jalil Manakpuri (Pg. 352)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے