ریت پر سفر کا لمحہ

احمد شمیم

ریت پر سفر کا لمحہ

احمد شمیم

MORE BY احمد شمیم

    INTERESTING FACT

    Ahmed Shamim was never able to visit his mother in Indian Kashmir. Ahmed Shamim is said to have composed the poem "Rait per safar kaa lamhaa" (A moment of journeying through sand) whose opening line is "Kabhi Hum Khoobsoorat thay" ("We were adored once") in memory of his mother. This free verse poem became his crowning achievement and a symbol of his poetic identity.

    کبھی ہم خوبصورت تھے

    کتابوں میں بسی

    خوشبو کی صورت

    سانس ساکن تھی

    بہت سے ان کہے لفظوں سے

    تصویریں بناتے تھے

    پرندوں کے پروں پر نظم لکھ کر

    دور کی جھیلوں میں بسنے والے

    لوگوں کو سناتے تھے

    جو ہم سے دور تھے

    لیکن ہمارے پاس رہتے تھے

    نئے دن کی مسافت

    جب کرن کے ساتھ

    آنگن میں اترتی تھی

    تو ہم کہتے تھے

    امی تتلیوں کے پر

    بہت ہی خوبصورت ہیں

    ہمیں ماتھے پہ بوسا دو

    کہ ہم کو تتلیوں کے

    جگنوؤں کے دیس جانا ہے

    ہمیں رنگوں کے جگنو

    روشنی کی تتلیاں آواز دیتی ہیں

    نئے دن کی مسافت

    رنگ میں ڈوبی ہوا کے ساتھ

    کھڑکی سے بلاتی ہے

    ہمیں ماتھے پہ بوسا دو

    ہمیں ماتھے پہ بوسا دو

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    نیرہ نور

    نیرہ نور

    عابد علی بیگ

    عابد علی بیگ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY