احمد ندیم قاسمی

  • 1916-2006
  • لاھور

پاکستان کے ممتاز ترین ترقی پسند شاعر، اہم افسانہ نگاروں میں بھی ممتاز، اپنے رسالے ’فنون‘ کے لئے مشہور، سعادت حسن منٹو کے ہم عصر

پاکستان کے ممتاز ترین ترقی پسند شاعر، اہم افسانہ نگاروں میں بھی ممتاز، اپنے رسالے ’فنون‘ کے لئے مشہور، سعادت حسن منٹو کے ہم عصر

Editor Choiceمنتخب Popular Choiceمقبول
غزلصنف
0 ا ,اپنے ماحول سے تھے قیس کے رشتے کیا کیا2
0 ا ,اعجاز ہے یہ تیری پریشاں_نظری کا2
0 ا ,اک محبت کے عوض ارض و سما دے دوں_گا0
0 ا ,انداز ہو_بہو تری آواز_پا کا تھا3
0 ا ,تو جو بدلا تو زمانہ بھی بدل جائے_گا0
0 ا ,تیری محفل بھی مداوا نہیں تنہائی کا2
0 ا ,سورج کو نکلنا ہے سو نکلے_گا دوبارا2
0 ا ,عجیب رنگ ترے حسن کا لگاؤ میں تھا0
0 ا ,کون کہتا ہے کہ موت آئی تو مر جاؤں_گا0
0 ا ,لب_خاموش سے افشا ہوگا0
0 ا ,میں کسی شخص سے بیزار نہیں ہو سکتا0
0 ا ,میں وہ شاعر ہوں جو شاہوں کا ثنا_خواں نہ ہوا0
0 بارش کی رت تھی رات تھی پہلوئے یار تھا0
0 تنگ آ جاتے ہیں دریا جو کہستانوں میں0
0 جب بھی آنکھوں میں تری رخصت کا منظر آ گیا0
0 دلوں سے آرزوئے عمر جاوداں نہ گئی0
0 عجب سرور ملا ہے مجھے دعا کر کے0
0 م ,جانے کہاں تھے اور چلے تھے کہاں سے ہم3
0 م ,ہوتا نہیں ذوق_زندگی کم0
0 ن ,احساس میں پھول کھل رہے ہیں0
0 ن ,پھولوں سے لہو کیسے ٹپکتا ہوا دیکھوں0
0 ن ,تجھے کھو کر بھی تجھے پاؤں جہاں تک دیکھوں0
0 ن ,جی چاہتا ہے فلک پہ جاؤں2
0 ن ,گو مرے دل کے زخم ذاتی ہیں2
0 ن ,لبوں پہ نرم تبسم رچا کے دھل جائیں0
0 ن ,مروں تو میں کسی چہرے میں رنگ بھر جاؤں0
0 ن ,ہم دن کے پیامی ہیں مگر کشتۂ_شب ہیں2
0 ن ,یوں تو پہنے ہوئے پیراہن_خار آتا ہوں0
0 ھ ,تو بگڑتا بھی ہے خاص اپنے ہی انداز کے ساتھ0
0 ہ ,مداوا حبس کا ہونے لگا آہستہ آہستہ2
0 ہمیشہ ظلم کے منظر ہمیں دکھائے گئے0
0 و ,فاصلے کے معنی کا کیوں فریب کھاتے ہو1
0 و ,یوں بے_کار نہ بیٹھو دن بھر یوں پیہم آنسو نہ بہاؤ0
0 ی ,اب تو شہروں سے خبر آتی ہے دیوانوں کی3
0 ے ,پھر بھیانک تیرگی میں آ گئے0
0 ی ,جب ترا حکم ملا ترک محبت کر دی3
0 ے ,جو لوگ دشمن_جاں تھے وہی سہارے تھے2
0 ے ,دعویٰ تو کیا حسن_جہاں_سوز کا سب نے2
0 ے ,سانس لینا بھی سزا لگتا ہے0
0 ی ,شام کو صبح_چمن یاد آئی1
0 ے ,شعور میں کبھی احساس میں بساؤں اسے0
0 ے ,عمر بھر اس نے اسی طرح لبھایا ہے مجھے0
0 ے ,قلم دل میں ڈبویا جا رہا ہے2
0 ے ,کھڑا تھا کب سے زمیں پیٹھ پر اٹھائے ہوئے3
0 ے ,میں ہوں یا تو ہے خود اپنے سے گریزاں جیسے0
0 ے ,ہر لمحہ اگر گریز_پا ہے2
0 ے ,ہم ان کے نقش_قدم ہی کو جادہ کرتے رہے0
0 ے ,ہم کبھی عشق کو وحشت نہیں بننے دیتے0
0 ے ,وہ کوئی اور نہ تھا چند خشک پتے تھے0
seek-warrow-w
  • 1
arrow-eseek-e1 - 49 of 49 items