تازہ نظمیں

نظموں کا وسیع ذخیرہ-اردو شاعری کی ایک صنف


اردو میں نظم کی صنف انیسویں صدی کی آخری دہائیوں کے دوران انگریزی کے اثر سے پیدا ہوئی جو دھیرے دھیرے پوری طرح قائم ہو گئی۔ نظم بحر اور قافیے میں بھی ہوتی ہے اور اس کے بغیر بھی۔ اب نثری نظم بھی اردو میں مستحکم ہو گئی ہے۔


نظم
آبائی گھر
آبائی مکانوں پر ستارہ
آپ ایک اشتعال انگیز شاعر ہیں
اپنے آپ سے
اپنی اپنی روشنی
اپنی ذات کی چوری
آج چلی ہے ہوا
اجنبی
آدمی کا انساں ہونا
آدھے راستے میں
آرام ہے ہمارا
آرزوئے حیات
ارملا
آزادی
اس سے بڑا دکھ کیا ہوگا
اس شہر میں
اس نے مجھ سے کہا تھا
اسم اعظم
اسی فطرت میں روشن ہیں
اصحاب گریہ
اطہرؔ نفیس کے لئے
اعتراف
اعتراف
آفٹر شاکس
آکٹوپس
المیہ
امتحان
امکان
انجام
انجانا دکھ
انجلاء کے لئے ایک نظم
انخلا
آنسو کی چلمن کے پیچھے
آہٹ
اور نیچے نہ اتار و مرے سامع مجھ کو
اے دل پہلے بھی ہم تنہا تھے
اے صبح وطن
اے مرے خواب
اے وطن اے وطن
ایک اجنبی چہرہ
ایک نظم
ایک نظم کہ غزل کہیں جسے
ایک ہی راستہ
ایوان تثلیث میں شمع وحدت جلے
باز دید
باز گشت
بچے اور بدبو
بد حالی کی خود نوشت
برسات
برسات کی خشک شام
بگولے شور کرتے ہیں
بگیا لہولہان
بلیدان
بند کمرہ
بہار
بے کراں
بیاد‌‌ اختر شیرانیؔ
بیضۂ محرم
پائے جنوں شرط نہیں
پتھراؤ کی چومکھ برکھا میں
پتوں کے سائے
پچھلی رات
پردیس کا شہر
پشیمانی
پھول برساؤ شہیدان وطن کی خاک پر
پیام
تجارتی ہوا
تجھے کیا خبر
تحفۂ درویش
تحیر عشق
ترک تعلق
تعلق
تم روح کے ساز پہ
تنہائی
تو مجھے اتنے پیار سے مت دیکھ
تیرا نام
تیسری نظم
ٹھہرے ہوئے موسم کی ایک نظم
ٹیپو کی آواز
جلا وطن کی واپسی
جنم اسٹمی
جہاں ہم لوگ رہتے ہیں
چاقو کا دستہ
چالیسواں دن
چپکے چپکے رویا جائے
چنا ہم نے پہاڑی راستہ
چھوٹو
چو کی لفظی تحقیق
چوٹ
چیونٹی بھر آٹا
حاجی بابا
حسن قبول
حصول کل اور ایک منظر
خرید و فروخت
خضر راہ
خطائے بزرگاں
خمستانِ ازل کا ساقی
خواب
خواب حقیقت
خود فریبی
seek-warrow-warrow-eseek-e1 - 100 of 291 items