aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

آنکھ کی یہ ایک حسرت تھی کہ بس پوری ہوئی

شہریار

آنکھ کی یہ ایک حسرت تھی کہ بس پوری ہوئی

شہریار

MORE BYشہریار

    آنکھ کی یہ ایک حسرت تھی کہ بس پوری ہوئی

    آنسوؤں میں بھیگ جانے کی ہوس پوری ہوئی

    آ رہی ہے جسم کی دیوار گرنے کی صدا

    اک عجب خواہش تھی جو اب کے برس پوری ہوئی

    اس خزاں آثار لمحے کی حکایت ہے یہی

    اک گل نا آفریدہ کی ہوس پوری ہوئی

    آگ کے شعلوں سے سارا شہر روشن ہو گیا

    ہو مبارک آرزوئے خار و خس پوری ہوئی

    کیسی دستک تھی کہ دروازے مقفل ہو گئے

    اور اس کے ساتھ روداد قفس پوری ہوئی

    مأخذ:

    sooraj ko nikalta dekhoon (Pg. 316)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے