عزیزو اس کو نہ گھڑیال کی صدا سمجھو

شیخ ابراہیم ذوقؔ

عزیزو اس کو نہ گھڑیال کی صدا سمجھو

شیخ ابراہیم ذوقؔ

MORE BYشیخ ابراہیم ذوقؔ

    عزیزو اس کو نہ گھڑیال کی صدا سمجھو

    یہ عمر رفتہ کی اپنی صدائے پا سمجھو

    بجا کہے جسے عالم اسے بجا سمجھو

    زبان خلق کو نقارۂ خدا سمجھو

    نہ سمجھو دشت شفاخانۂ جنوں ہے یہ

    جو خاک سی بھی پڑے پھانکنی دوا سمجھو

    سمجھ تو کورسوادوں کو ہو جو علم نہ ہو

    اگر سمجھ بھی نہ ہو کور بے عصا سمجھو

    پڑے کتاب کے قصوں میں کیا کرو دل صاف

    صفا ہو دل تو بہ از روضۃ الصفا سمجھو

    ہنسے جو وہ مرے رونے پہ تو صف مژگاں

    نہ سمجھو تم اسے دیوار قہقہا سمجھو

    نفس کی آمد و شد ہے نماز اہل حیات

    جو یہ قضا ہو تو اے غافلو قضا سمجھو

    تمہاری راہ میں ملتے ہیں خاک میں لاکھوں

    اس آرزو میں کہ تم اپنا خاک پا سمجھو

    دعائیں دیتے ہیں ہم دل سے تیغ قاتل کو

    لب جراحت دل کو لب دعا سمجھو

    بہا دیا مرا خوں اس نے اپنے کوچے میں

    اسی کو یارو دیت سمجھو خوں بہا سمجھو

    سمجھ ہے اور تمہاری کہوں میں تم سے کیا

    تم اپنے دل میں خدا جانے سن کے کیا سمجھو

    تمہیں ہے نام سے کیا کام مثل آئینہ

    جو روبرو ہو اسے صورت آشنا سمجھو

    زہے نصیب کہ ہنگام مشق تیر ستم

    ہمارے ڈھیر کو تم تو وہ خاک کا سمجھو

    نہیں ہے کم زر خالص سے زردی رخسار

    تم اپنے عشق کو اے ذوقؔ کیمیا سمجھو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY