بادباں کھلنے سے پہلے کا اشارہ دیکھنا

پروین شاکر

بادباں کھلنے سے پہلے کا اشارہ دیکھنا

پروین شاکر

MORE BY پروین شاکر

    بادباں کھلنے سے پہلے کا اشارہ دیکھنا

    میں سمندر دیکھتی ہوں تم کنارہ دیکھنا

    یوں بچھڑنا بھی بہت آساں نہ تھا اس سے مگر

    جاتے جاتے اس کا وہ مڑ کر دوبارہ دیکھنا

    کس شباہت کو لیے آیا ہے دروازے پہ چاند

    اے شب ہجراں ذرا اپنا ستارہ دیکھنا

    کیا قیامت ہے کہ جن کے نام پر پسپا ہوئے

    ان ہی لوگوں کو مقابل میں صف آرا دیکھنا

    جب بنام دل گواہی سر کی مانگی جائے گی

    خون میں ڈوبا ہوا پرچم ہمارا دیکھنا

    جیتنے میں بھی جہاں جی کا زیاں پہلے سے ہے

    ایسی بازی ہارنے میں کیا خسارہ دیکھنا

    آئنے کی آنکھ ہی کچھ کم نہ تھی میرے لیے

    جانے اب کیا کیا دکھائے گا تمہارا دیکھنا

    ایک مشت خاک اور وہ بھی ہوا کی زد میں ہے

    زندگی کی بے بسی کا استعارہ دیکھنا

    RECITATIONS

    پروین شاکر

    پروین شاکر

    صبیحہ خان

    صبیحہ خان

    پروین شاکر

    بادباں کھلنے سے پہلے کا اشارہ دیکھنا پروین شاکر

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites