بغیر ساغر و یار جواں نہیں گزرے

سراج الدین ظفر

بغیر ساغر و یار جواں نہیں گزرے

سراج الدین ظفر

MORE BY سراج الدین ظفر

    بغیر ساغر و یار جواں نہیں گزرے

    ہماری عمر کے دن رائیگاں نہیں گزرے

    ہجوم گل میں رہے ہم ہزار دست دراز

    صبا نفس تھے کسی پر گراں نہیں گزرے

    نمود ان کی بھی دور سبو میں تھی کل رات

    ابھی جو دور تہ آسماں نہیں گزرے

    نقوش پا سے ہمارے اگے ہیں لالہ و گل

    رہ بہار سے ہم بے نشاں نہیں گزرے

    غلط ہے ہم نفسو ان کا زندگی میں شمار

    جو دن بخدمت پیر مغاں نہیں گزرے

    ظفرؔ کا مشرب رندی ہے اک جہاں سے الگ

    مری نگاہ سے ایسے جواں نہیں گزرے

    ذریعہ:

    • Book: rang-e- gazal (Pg. 232)
    • Author: shahzaad ahmad
    • مطبع: nazim majlis taraqqi adab lahore (2008)
    • اشاعت: 2008
    0
    COMMENT
    COMMENTS
    تبصرے دیکھیے

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites