aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

بحر ہستی میں صحبت احباب

نظیر اکبرآبادی

بحر ہستی میں صحبت احباب

نظیر اکبرآبادی

MORE BYنظیر اکبرآبادی

    بحر ہستی میں صحبت احباب

    یوں ہے جیسے بروئے آب حباب

    گردش آسماں میں ہم کیا ہیں

    پر کاہے میانۂ گرداب

    بادۂ ناب کیا ہے خون جگر

    زردئ رنگ ہے شب مہتاب

    جس کو رقص و سرود کہتے ہیں

    وہ بھی ہے اک ہوائے خانہ خراب

    عمر کہتے ہیں جس کو وہ کیا ہے

    مثل تحریر موج نقش بر آب

    جسم کیا روح کی ہے جولا نگاہ

    روح کیا اک سوار پا بہ رکاب

    حسن اور عشق کیا ہیں یہ بھی ہیں

    خطفہ برق و قطرۂ سیماب

    زندگانی و مرگ بھی کیا ہیں

    ایک مثل خیال و دیگر خواب

    فرصت عمر قطرۂ شبنم

    وصل محبوب گوہر نایاب

    کیوں نہ عشرت دو چند ہو جو ہے

    یار مہ چہرہ اور شب مہتاب

    سب کتابوں کے کھل گئے معنی

    جب سے دیکھی نظیرؔ دل کی کتاب

    مأخذ:

    Deewan-e-Nazeer Akbarabadi (Pg. page-36 ebook-158)

      • اشاعت: 1942
      • ناشر: انجمن ترقی اردو (ہند)، دہلی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے