دیار دل کی رات میں چراغ سا جلا گیا

ناصر کاظمی

دیار دل کی رات میں چراغ سا جلا گیا

ناصر کاظمی

MORE BY ناصر کاظمی

    دیار دل کی رات میں چراغ سا جلا گیا

    ملا نہیں تو کیا ہوا وہ شکل تو دکھا گیا

    وہ دوستی تو خیر اب نصیب دشمناں ہوئی

    وہ چھوٹی چھوٹی رنجشوں کا لطف بھی چلا گیا

    جدائیوں کے زخم درد زندگی نے بھر دیے

    تجھے بھی نیند آ گئی مجھے بھی صبر آ گیا

    پکارتی ہیں فرصتیں کہاں گئیں وہ صحبتیں

    زمیں نگل گئی انہیں کہ آسمان کھا گیا

    یہ صبح کی سفیدیاں یہ دوپہر کی زردیاں

    اب آئنے میں دیکھتا ہوں میں کہاں چلا گیا

    یہ کس خوشی کی ریت پر غموں کو نیند آ گئی

    وہ لہر کس طرف گئی یہ میں کہاں سما گیا

    گئے دنوں کی لاش پر پڑے رہو گے کب تلک

    الم کشو اٹھو کہ آفتاب سر پہ آ گیا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    زہرا نگاہ

    زہرا نگاہ

    نور جہاں

    نور جہاں

    متفرق

    متفرق

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    دیار دل کی رات میں چراغ سا جلا گیا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY