aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

ندی کا آب دیا ہے تو کچھ بہاؤ بھی دے

شکیل اعظمی

ندی کا آب دیا ہے تو کچھ بہاؤ بھی دے

شکیل اعظمی

MORE BYشکیل اعظمی

    ندی کا آب دیا ہے تو کچھ بہاؤ بھی دے

    مری غزل کو نیا پن بھی دے رچاؤ بھی دے

    چلا کے سرد ہوا مجھ کو منجمد بھی کر

    پگھل کے پھیلنا چاہوں تو اک الاؤ بھی دے

    کہ جس کے درد کا احساس تیرے جیسا ہو

    کبھی کبھی مری فطرت کو ایسا گھاؤ بھی دے

    عذاب سیل مسلسل جو دے رہا ہے مجھے

    تو سطح آب پہ چلنے کو ایک ناؤ بھی دے

    مسافرت کے کئی مرحلے تمام ہوئے

    کہ میری خانہ بدوشی کو اب پڑاؤ بھی دے

    مأخذ:

    دل پرندہ ہے (Pg. 45)

    • مصنف: شکیل اعظمی
      • اشاعت: First
      • ناشر: ریختہ پبلی کیشنز
      • سن اشاعت: 2023

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے