سفر منزل شب یاد نہیں

ناصر کاظمی

سفر منزل شب یاد نہیں

ناصر کاظمی

MORE BYناصر کاظمی

    سفر منزل شب یاد نہیں

    لوگ رخصت ہوئے کب یاد نہیں

    اولیں قرب کی سرشاری میں

    کتنے ارماں تھے جو اب یاد نہیں

    دل میں ہر وقت چبھن رہتی تھی

    تھی مجھے کس کی طلب یاد نہیں

    وہ ستارا تھی کہ شبنم تھی کہ پھول

    ایک صورت تھی عجب یاد نہیں

    کیسی ویراں ہے گزر گاہ خیال

    جب سے وہ عارض و لب یاد نہیں

    بھولتے جاتے ہیں ماضی کے دیار

    یاد آئیں بھی تو سب یاد نہیں

    ایسا الجھا ہوں غم دنیا میں

    ایک بھی خواب طرب یاد نہیں

    رشتۂ جاں تھا کبھی جس کا خیال

    اس کی صورت بھی تو اب یاد نہیں

    یہ حقیقت ہے کہ احباب کو ہم

    یاد ہی کب تھے جو اب یاد نہیں

    یاد ہے سیر چراغاں ناصرؔ

    دل کے بجھنے کا سبب یاد نہیں

    RECITATIONS

    نامعلوم

    نامعلوم,

    نامعلوم

    سفر منزل شب یاد نہیں نامعلوم

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے