غم دنیا سے گر پائی بھی فرصت سر اٹھانے کی

مرزا غالب

غم دنیا سے گر پائی بھی فرصت سر اٹھانے کی

مرزا غالب

MORE BYمرزا غالب

    غم دنیا سے گر پائی بھی فرصت سر اٹھانے کی

    فلک کا دیکھنا تقریب تیرے یاد آنے کی

    کھلے گا کس طرح مضموں مرے مکتوب کا یارب

    قسم کھائی ہے اس کافر نے کاغذ کے جلانے کی

    لپٹنا پرنیاں میں شعلۂ آتش کا پنہاں ہے

    ولے مشکل ہے حکمت دل میں سوز غم چھپانے کی

    انہیں منظور اپنے زخمیوں کا دیکھ آنا تھا

    اٹھے تھے سیر گل کو دیکھنا شوخی بہانے کی

    ہماری سادگی تھی التفات ناز پر مرنا

    ترا آنا نہ تھا ظالم مگر تمہید جانے کی

    لکد کوب حوادث کا تحمل کر نہیں سکتی

    مری طاقت کہ ضامن تھی بتوں کی ناز اٹھانے کی

    کہوں کیا خوبی اوضاع ابنائے زماں غالبؔ

    بدی کی اس نے جس سے ہم نے کی تھی بارہا نیکی

    مآخذ :
    • کتاب : Deewan-e-Ghalib Jadeed (Al-Maroof Ba Nuskha-e-Hameedia) (Pg. 307)
    • Author : Mufti Mohammad Anwar-ul-haque
    • مطبع : Madhya Pradesh Urdu Academy ,Bhopal (1904-1982)
    • اشاعت : 1904-1982

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY