حیراں ہے جبیں آج کدھر سجدہ روا ہے

فیض احمد فیض

حیراں ہے جبیں آج کدھر سجدہ روا ہے

فیض احمد فیض

MORE BYفیض احمد فیض

    دلچسپ معلومات

    Faiz wrote this ghazal in October 1977, a few months after General Zia ul Haq overthrew Z. A. Bhutto (July 5, 1977)

    حیراں ہے جبیں آج کدھر سجدہ روا ہے

    سر پر ہیں خداوند سر عرش خدا ہے

    کب تک اسے سینچو گے تمنائے ثمر میں

    یہ صبر کا پودا تو نہ پھولا نہ پھلا ہے

    ملتا ہے خراج اس کو تری نان جویں سے

    ہر بادشہ وقت ترے در کا گدا ہے

    ہر ایک عقوبت سے ہے تلخی میں سوا تر

    وہ رنگ جو ناکردہ گناہوں کی سزا ہے

    احسان لیے کتنے مسیحا نفسوں کے

    کیا کیجیے دل کا نہ جلا ہے نہ بجھا ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Nuskha Hai Wafa (Pg. 583)

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے