ہر ایک بات نہ کیوں زہر سی ہماری لگے

احمد فراز

ہر ایک بات نہ کیوں زہر سی ہماری لگے

احمد فراز

MORE BY احمد فراز

    ہر ایک بات نہ کیوں زہر سی ہماری لگے

    کہ ہم کو دست زمانہ سے زخم کاری لگے

    اداسیاں ہوں مسلسل تو دل نہیں روتا

    کبھی کبھی ہو تو یہ کیفیت بھی پیاری لگے

    بظاہر ایک ہی شب ہے فراق یار مگر

    کوئی گزارنے بیٹھے تو عمر ساری لگے

    علاج اس دل درد آشنا کا کیا کیجے

    کہ تیر بن کے جسے حرف غم گساری لگے

    ہمارے پاس بھی بیٹھو بس اتنا چاہتے ہیں

    ہمارے ساتھ طبیعت اگر تمہاری لگے

    فرازؔ تیرے جنوں کا خیال ہے ورنہ

    یہ کیا ضرور وہ صورت سبھی کو پیاری لگے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    نہال عبداللہ

    نہال عبداللہ

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    ہر ایک بات نہ کیوں زہر سی ہماری لگے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY