ہوا کے پر کترنا اب ضروری ہو گیا ہے

خوشبیر سنگھ شادؔ

ہوا کے پر کترنا اب ضروری ہو گیا ہے

خوشبیر سنگھ شادؔ

MORE BYخوشبیر سنگھ شادؔ

    ہوا کے پر کترنا اب ضروری ہو گیا ہے

    مرا پرواز بھرنا اب ضروری ہو گیا ہے

    مرے اندر کئی احساس پتھر ہو رہے ہیں

    یہ شیرازہ بکھرنا اب ضروری ہو گیا ہے

    میں اکثر زندگی کے ان مراحل سے بھی گزرا

    جہاں لگتا تھا مرنا اب ضروری ہو گیا ہے

    مری خاموشیاں اب مجھ پہ حاوی ہو رہی ہیں

    کہ کھل کر بات کرنا اب ضروری ہو گیا ہے

    بلندی بھی نشیبوں کی طرح لگنے لگی ہے

    بلندی سے اترنا اب ضروری ہو گیا ہے

    میں اس یک رنگئ حالات سے اکتا چکا ہوں

    حقیقت سے مکرنا اب ضروری ہو گیا ہے

    مری آنکھیں بہت ویران ہوتی جا رہی ہیں

    خلا میں رنگ بھرنا اب ضروری ہو گیا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے