جذبۂ سوز طلب کو بے کراں کرتے چلو

ساغر صدیقی

جذبۂ سوز طلب کو بے کراں کرتے چلو

ساغر صدیقی

MORE BY ساغر صدیقی

    جذبۂ سوز طلب کو بے کراں کرتے چلو

    کو بہ کو روشن چراغ کارواں کرتے چلو

    چشم ساقی پر تبسم میکدہ بہکا ہوا

    آؤ قسمت کو حریف کہکشاں کرتے چلو

    چھین لاؤ آسماں سے مہر و مہ کی عظمتیں

    اور ٹوٹے جھونپڑوں کو ضو فشاں کرتے چلو

    زندگی کو لوگ کہتے ہیں برائے بندگی

    زندگی کٹ جائے گی ذکر بتاں کرتے چلو

    جن سے زندہ ہو یقین و آگہی کی آبرو

    عشق کی راہوں میں کچھ ایسے گماں کرتے چلو

    ہر نفس اے جینے والو شغل پیمانہ رہے

    بے خودی کو زندگی کا پاسباں کرتے چلو

    چھیڑ کر ساغرؔ کسی کے گیسوؤں کی داستاں

    ان شگوفوں کو ذرا شعلہ زباں کرتے چلو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY