کانٹا سا جو چبھا تھا وہ لو دے گیا ہے کیا

ادا جعفری

کانٹا سا جو چبھا تھا وہ لو دے گیا ہے کیا

ادا جعفری

MORE BYادا جعفری

    کانٹا سا جو چبھا تھا وہ لو دے گیا ہے کیا

    گھلتا ہوا لہو میں یہ خورشید سا ہے کیا

    پلکوں کے بیچ سارے اجالے سمٹ گئے

    سایہ نہ ساتھ دے یہ وہی مرحلہ ہے کیا

    میں آندھیوں کے پاس تلاش صبا میں ہوں

    تم مجھ سے پوچھتے ہو مرا حوصلہ ہے کیا

    ساگر ہوں اور موج کے ہر دائرے میں ہوں

    ساحل پہ کوئی نقش قدم کھو گیا ہے کیا

    سو سو طرح لکھا تو سہی حرف آرزو

    اک حرف آرزو ہی مری انتہا ہے کیا

    اک خواب دل پذیر گھنی چھاؤں کی طرح

    یہ بھی نہیں تو پھر مری زنجیر پا ہے کیا

    کیا پھر کسی نے قرض مروت ادا کیا

    کیوں آنکھ بے سوال ہے دل پھر دکھا ہے کیا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    نامعلوم

    نامعلوم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY