کہیں سے موت کو لاؤ کہ غم کی رات کٹے

راجیندر کرشن

کہیں سے موت کو لاؤ کہ غم کی رات کٹے

راجیندر کرشن

MORE BYراجیندر کرشن

    دلچسپ معلومات

    (1965) :فلم خاندان

    کہیں سے موت کو لاؤ کہ غم کی رات کٹے

    مرا ہی سوگ مناؤ کہ غم کی رات کٹے

    کرے نہ پیچھا مرا زندگی کو سمجھا دو

    یہ راہ اس کو بھلاؤ کہ غم کی رات کٹے

    کہو بہاروں سے اب شاخ دل نہ ہوگی ہری

    خزاں کے گیت سناؤ کہ غم کی رات کٹے

    نہ چارہ گر کی ضرورت نہ کچھ دوا کی ہے

    دعا کو ہاتھ اٹھاؤ کہ غم کی رات کٹے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY