Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

کسی کے ہاتھ کہاں یہ خزانہ آتا ہے

ادریس بابر

کسی کے ہاتھ کہاں یہ خزانہ آتا ہے

ادریس بابر

MORE BYادریس بابر

    کسی کے ہاتھ کہاں یہ خزانہ آتا ہے

    مرے عزیز کو ہر اک بہانہ آتا ہے

    ذرا سا مل کے دکھاؤ کہ ایسے ملتے ہیں

    بہت پتا ہے تمہیں چھوڑ جانا آتا ہے

    ستارے دیکھ کے جلتے ہیں آنکھیں ملتے ہیں

    اک آدمی لئے شمع فسانہ آتا ہے

    ابھی جزیرے پہ ہم تم نئے نئے تو ہیں دوست

    ڈرو نہیں مجھے سب کچھ بنانا آتا ہے

    یہاں چراغ سے آگے چراغ جلتا نہیں

    فقط گھرانے کے پیچھے گھرانا آتا ہے

    یہ بات چلتی ہے سینہ بہ سینہ چلتی ہے

    وہ ساتھ آتا ہے شانہ بہ شانہ آتا ہے

    گلاب سنیما سے پہلے چاند باغ کے بعد

    اتر پڑوں گا جہاں کارخانہ آتا ہے

    یہ کہہ کے اس نے سمسٹر بریک کر ڈالا

    سنا تھا آپ کو لکھنا لکھانا آتا ہے

    زمانے ہو گئے دریا تو کہہ گیا تھا مجھے

    بس ایک موج کو کر کے روانہ آتا ہے

    چھلک نہ جائے مرا رنج میری آنکھوں سے

    تمہیں تو اپنی خوشی کو چھپانا آنا ہے

    وہ روز بھر کے خلائی جہاز اڑاتے پھریں

    ہمیں بھی رج کے تمسخر اڑانا آتا ہے

    پچاس میل ہے خشکی سے بحریہ ٹاؤن

    بس ایک گھنٹے میں اچھا زمانہ آتا ہے

    بریک ڈانس سکھایا ہے ناؤ نے دل کو

    ہوا کا گیت سمندر کو گانا آتا ہے

    مجھے ڈیفینس کی لنگوا‌ فرانکا نئیں آتی

    تمہیں تو صدر کا قومی ترانہ آتا ہے

    مجھے تو خیر زمیں کی زباں نہیں آتی

    تمہیں مریخ کا قومی ترانہ آتا ہے

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے