aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

کچھ تو تسکین اضطراب ملے

صدا انبالوی

کچھ تو تسکین اضطراب ملے

صدا انبالوی

MORE BYصدا انبالوی

    کچھ تو تسکین اضطراب ملے

    وہ نہیں ملتے تو شراب ملے

    میں سمندر میں بھی رہا پیاسا

    آب میں بھی مجھے سراب ملے

    منہ لگی چھوٹتی نہیں واعظ

    اب جو ملنا ہے سو عذاب ملے

    چوم لوں میں ورق ورق اس کا

    تیرے چہرے سے جو کتاب ملے

    زندگی زندگی سی لگتی ہے

    آپ جب سے ہمیں جناب ملے

    کون تعبیر کی کرے چنتا

    پھر سے کوئی حسین خواب ملے

    دن عبادت میں ہو گزر یارب

    وقت مغرب مگر شراب ملے

    یا خدا دل ملے شجر جیسا

    غم جو مجھ کو ہیں بے حساب ملے

    کھل کے رونا بھی کب نصیب ہوا

    پھر نہ یہ ہستیٔ حباب ملے

    دل کے نکلے غریب سب کے سب

    ہم کو جو صاحب نصاب ملے

    کچھ تو پہلے ہی دربدر تھا صداؔ

    دوست بھی خانماں خراب ملے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے