Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

منتظر دشت دل و جاں ہے کہ آہو آئے

شہزاد احمد

منتظر دشت دل و جاں ہے کہ آہو آئے

شہزاد احمد

MORE BYشہزاد احمد

    منتظر دشت دل و جاں ہے کہ آہو آئے

    سارے منظر ہی بدل جائیں اگر تو آئے

    نیند آئے تو اچانک تری آہٹ سن لوں

    جاگ اٹھوں تو بدن سے تری خوشبو آئے

    بے ہنر ہاتھ چمکنے لگا سورج کی طرح

    آج ہم کس سے ملے آج کسے چھو آئے

    صوت ہی صوت ہے تصویر ہی تصویر ہے تو

    یاد تیری کئی باتیں کئی پہلو آئے

    ہم تجھے دیکھتے ہی نقش بہ دیوار ہوئے

    اب وہی تجھ سے ملے گا جسے جادو آئے

    اپنے ہی عکس کو پانی میں کہاں تک دیکھوں

    ہجر کی شام ہے کوئی تو لب جو آئے

    کسی جانب نظر آتا نہیں بادل کوئی

    اور جب سیل بلا آئے تو ہر سو آئے

    چاہتا ہوں کہ ہو پرواز ستاروں سے بلند

    اور مرے حصے میں ٹوٹے ہوئے بازو آئے

    درد میں ڈوبی ہوئی راکھ میں نہلائی ہوئی

    رات یوں آئی ہے جیسے کوئی سادھو آئے

    راستہ روک سکی ہیں نہ فصیلیں نہ حصار

    پھول جنگل میں کھلے شہر میں خوشبو آئے

    آسمانوں پہ نہ تارے ہیں نہ بادل ہے نہ چاند

    اب تو ممکن ہے کہیں سے کوئی جگنو آئے

    وقت رخصت مرے ہم راہ کوئی کب آیا

    اور اگر لوٹ کے آئے بھی تو آنسو آئے

    روگ بھی تو نے لگایا ہے انوکھا شہزادؔ

    اب کہاں سے ترے اس درد کا دارو آئے

    مأخذ :
    • کتاب : Deewar pe dastak (Pg. 974)
    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے