نقش فریادی ہے کس کی شوخیٔ تحریر کا

مرزا غالب

نقش فریادی ہے کس کی شوخیٔ تحریر کا

مرزا غالب

MORE BYمرزا غالب

    INTERESTING FACT

    غالب نے ایک خط میں خود اس مطلع کے سلسلے میں فرمایا ہے ۔ ''ایران میں رسم ہے کہ داد خواہ کاغذ کے کپڑے پہن کر حاکم کے سامنے جاتا ہے جیسے مشعل دن کو جلانا یا خون آلودہ کپڑا بانس پر لٹکا کر لے جانا'' ۔

    نقش فریادی ہے کس کی شوخیٔ تحریر کا

    کاغذی ہے پیرہن ہر پیکر تصویر کا

    کاو کاو سخت جانی ہائے تنہائی نہ پوچھ

    صبح کرنا شام کا لانا ہے جوئے شیر کا

    جذبۂ بے اختیار شوق دیکھا چاہیے

    سینۂ شمشیر سے باہر ہے دم شمشیر کا

    آگہی دام شنیدن جس قدر چاہے بچھائے

    مدعا عنقا ہے اپنے عالم تقریر کا

    بسکہ ہوں غالبؔ اسیری میں بھی آتش زیر پا

    موئے آتش دیدہ ہے حلقہ مری زنجیر کا

    آتشیں پا ہوں گداز وحشت زنداں نہ پوچھ

    موئے آتش دیدہ ہے ہر حلقہ یاں زنجیر کا

    شوخیٔ نیرنگ صید وحشت طاؤس ہے

    دام سبزہ میں ہے پرواز چمن تسخیر کا

    لذت ایجاد ناز افسون عرض ذوق قتل

    نعل آتش میں ہے تیغ یار سے نخچیر کا

    خشت پشت دست عجز و قالب آغوش وداع

    پر ہوا ہے سیل سے پیمانہ کس تعمیر کا

    وحشت خواب عدم شور تماشا ہے اسدؔ

    جو مزہ جوہر نہیں آئینۂ تعبیر کا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    طلعت محمود

    طلعت محمود

    ذوالفقار علی بخاری

    ذوالفقار علی بخاری

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    نقش فریادی ہے کس کی شوخیٔ تحریر کا فصیح اکمل

    مآخذ:

    • کتاب : Deewan-e-Ghalib Jadeed (Al-Maroof Ba Nuskha-e-Hameedia) (Pg. 147)
    • Author : Mufti Mohammad Anwar-ul-haque
    • مطبع : Madhya Pradesh Urdu Academy ,Bhopal (1904-1982)
    • اشاعت : 1904-1982
    • کتاب : Ghair Mutdavil Kalam-e-Ghalib (Pg. 38)
    • Author : Jamal Abdul Wahid
    • مطبع : Ghalib Academy Basti Hazrat Nizamuddin,New Delhi-13 (2016)
    • اشاعت : 2016

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY