aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

پردے پردے میں بہت مجھ پہ ترے وار چلے

مبارک عظیم آبادی

پردے پردے میں بہت مجھ پہ ترے وار چلے

مبارک عظیم آبادی

MORE BYمبارک عظیم آبادی

    پردے پردے میں بہت مجھ پہ ترے وار چلے

    صاف اب حلق پہ خنجر چلے تلوار چلے

    دورئ منزل مقصد کوئی ہم سے پوچھے

    بیٹھے سو بار ہم اس راہ میں سو بار چلے

    کون پامال ہوا اس کی بلا دیکھتی ہے

    دیکھتا اپنی ہی جو شوخیٔ رفتار چلے

    بے پیے چلتا ہے یوں جھوم کے وہ مست شباب

    جس طرح پی کے کوئی رند قدح خوار چلے

    چشم و ابرو کی یہ سازش جگر و دل کو نوید

    ایک کا تیر چلے ایک کی تلوار چلے

    کچھ اس انداز سے صیاد نے آزاد کیا

    جو چلے چھٹ کے قفس سے وہ گرفتار چلے

    جس کو رہنا ہو رہے قیدئ زنداں ہو کر

    ہم تو اے ہم نفسو پھاند کے دیوار چلے

    پھر مبارکؔ وہی گھنگھور گھٹائیں آئیں

    جانب مے کدہ پھر رند قدح خوار چلے

    مأخذ:

    intekhaab-e-kalaam (Pg. 34)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے