Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

رونق فروغ‌ درد سے کچھ انجمن میں ہے

بیباک بھوجپوری

رونق فروغ‌ درد سے کچھ انجمن میں ہے

بیباک بھوجپوری

MORE BYبیباک بھوجپوری

    رونق فروغ‌ درد سے کچھ انجمن میں ہے

    خون جگر غریب کا ہر بانکپن میں ہے

    دیوانہ زندگانی کا دیتا ہے یوں ثبوت

    باہر لحد سے ہے کبھی خونیں کفن میں ہے

    دل کے لہو سے روح کی ہوتی ہے پرورش

    معراج آگہی کی وفور محن میں ہے

    ہر بوند نوک کلک کی دیتی ہے درس ہوش

    کونین کا سراغ بھی بطن سخن میں ہے

    دو یک نفس ہے خیمۂ گل کا فریب رنگ

    عبرت فروش خار بھی صحن چمن میں ہے

    آفاق ساز مذہب ایثار پھر سے ڈھونڈ

    اک لعل‌ شب چراغ بھی طاق کہن میں ہے

    یارو سخن برائے سخن مطلقاً عبث

    پیغام‌ ہست و بود کہیں فکر و فن میں ہے

    اخلاص دل کا رحمت باری سے کر طلب

    روشن چراغ عدل کہاں انجمن میں ہے

    بوزر کا فقر حضرت فاروقؓ کا مزاج

    اصنام ساز قوم کے شیخ زمن میں ہے

    سوداگری سے مانا کہ حاصل ہے کچھ وقار

    سامان مفسدات بھی تزئین تن میں ہے

    عصر رواں کے لوگ ہیں آوارگی پسند

    فتنہ بھی حرص و آز کا خضر زمن میں ہے

    شبنم سے پنکھڑی بھی سلگتی ہے پھول کی

    نیرنگئ خزاں بھی بہار چمن میں ہے

    فیضان ارتقا سے جنازہ خلوص کا

    خیرالامم کے دوش پہ شہر زمن میں ہے

    جمہوریت بھی طرفہ تماشہ کا کس قدر

    لوح و قلم کی جان ید اہرمن میں ہے

    اس افترا پہ دیجئے کچھ مفتری کو داد

    جنت اگر کہیں ہے تو میرے وطن میں ہے

    جانے کسے نصیب ہو ببیاکؔ آگہی

    ناقد جدید دور کا تخمین و ظن میں ہے

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے