روشن جمال یار سے ہے انجمن تمام

حسرتؔ موہانی

روشن جمال یار سے ہے انجمن تمام

حسرتؔ موہانی

MORE BY حسرتؔ موہانی

    روشن جمال یار سے ہے انجمن تمام

    دہکا ہوا ہے آتش گل سے چمن تمام

    حیرت غرور حسن سے شوخی سے اضطراب

    دل نے بھی تیرے سیکھ لیے ہیں چلن تمام

    اللہ ری جسم یار کی خوبی کہ خودبخود

    رنگینیوں میں ڈوب گیا پیرہن تمام

    دل خون ہو چکا ہے جگر ہو چکا ہے خاک

    باقی ہوں میں مجھے بھی کر اے تیغ زن تمام

    دیکھو تو چشم یار کی جادو نگاہیاں

    بے ہوش اک نظر میں ہوئی انجمن تمام

    ہے ناز حسن سے جو فروزاں جبین یار

    لبریز آب نور ہے چاہ ذقن تمام

    نشو و نمائے سبزہ و گل سے بہار میں

    شادابیوں نے گھیر لیا ہے چمن تمام

    اس نازنیں نے جب سے کیا ہے وہاں قیام

    گلزار بن گئی ہے زمین دکن تمام

    اچھا ہے اہل جور کیے جائیں سختیاں

    پھیلے گی یوں ہی شورش حب وطن تمام

    سمجھے ہیں اہل شرق کو شاید قریب مرگ

    مغرب کے یوں ہیں جمع یہ زاغ و زغن تمام

    شیرینئ نسیم ہے سوز و گداز میرؔ

    حسرتؔ ترے سخن پہ ہے لطف سخن تمام

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    عابدہ پروین

    عابدہ پروین

    جگجیت سنگھ

    جگجیت سنگھ

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    روشن جمال یار سے ہے انجمن تمام نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY