روز تاروں کو نمائش میں خلل پڑتا ہے

راحتؔ اندوری

روز تاروں کو نمائش میں خلل پڑتا ہے

راحتؔ اندوری

MORE BY راحتؔ اندوری

    روز تاروں کو نمائش میں خلل پڑتا ہے

    چاند پاگل ہے اندھیرے میں نکل پڑتا ہے

    ایک دیوانہ مسافر ہے مری آنکھوں میں

    وقت بے وقت ٹھہر جاتا ہے چل پڑتا ہے

    اپنی تعبیر کے چکر میں مرا جاگتا خواب

    روز سورج کی طرح گھر سے نکل پڑتا ہے

    روز پتھر کی حمایت میں غزل لکھتے ہیں

    روز شیشوں سے کوئی کام نکل پڑتا ہے

    اس کی یاد آئی ہے سانسو ذرا آہستہ چلو

    دھڑکنوں سے بھی عبادت میں خلل پڑتا ہے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    راحتؔ اندوری

    راحتؔ اندوری

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY