رکے رکے سے قدم رک کے بار بار چلے

گلزار

رکے رکے سے قدم رک کے بار بار چلے

گلزار

MORE BY گلزار

    رکے رکے سے قدم رک کے بار بار چلے

    قرار دے کے ترے در سے بے قرار چلے

    اٹھائے پھرتے تھے احسان جسم کا جاں پر

    چلے جہاں سے تو یہ پیرہن اتار چلے

    نہ جانے کون سی مٹی وطن کی مٹی تھی

    نظر میں دھول جگر میں لیے غبار چلے

    سحر نہ آئی کئی بار نیند سے جاگے

    تھی رات رات کی یہ زندگی گزار چلے

    ملی ہے شمع سے یہ رسم عاشقی ہم کو

    گناہ ہاتھ پہ لے کر گناہ گار چلے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    لتا منگیشکر

    لتا منگیشکر

    مآخذ:

    • Book : Chand Pukhraj Ka (Pg. 202)
    • Author : Gulzar
    • مطبع : Roopa And Company (1995)
    • اشاعت : 1995

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY