ساحل تمام اشک ندامت سے اٹ گیا

شکیب جلالی

ساحل تمام اشک ندامت سے اٹ گیا

شکیب جلالی

MORE BYشکیب جلالی

    ساحل تمام اشک ندامت سے اٹ گیا

    دریا سے کوئی شخص تو پیاسا پلٹ گیا

    لگتا تھا بے کراں مجھے صحرا میں آسماں

    پہنچا جو بستیوں میں تو خانوں میں بٹ گیا

    یا اتنا سخت جان کہ تلوار بے اثر

    یا اتنا نرم دل کہ رگ گل سے کٹ گیا

    بانہوں میں آ سکا نہ حویلی کا اک ستون

    پتلی میں میری آنکھ کی صحرا سمٹ گیا

    اب کون جائے کوئے ملامت کو چھوڑ کر

    قدموں سے آ کے اپنا ہی سایہ لپٹ گیا

    گنبد کا کیا قصور اسے کیوں کہو برا

    آیا جدھر سے تیر ادھر ہی پلٹ گیا

    رکھتا ہے خود سے کون حریفانہ کشمکش

    میں تھا کہ رات اپنے مقابل ہی ڈٹ گیا

    جس کی اماں میں ہوں وہی اکتا گیا نہ ہو

    بوندیں یہ کیوں برستی ہیں بادل تو چھٹ گیا

    وہ لمحۂ شعور جسے جانکنی کہیں

    چہرے سے زندگی کے نقابیں الٹ گیا

    ٹھوکر سے میرا پاؤں تو زخمی ہوا ضرور

    رستے میں جو کھڑا تھا وہ کہسار ہٹ گیا

    اک حشر سا بپا تھا مرے دل میں اے شکیبؔ

    کھولیں جو کھڑکیاں تو ذرا شور گھٹ گیا

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Shakiib Jalali (Pg. 138)
    • Author : Mohd Nasir Khan
    • مطبع : Farid Book Depot Pvt. Ltd (2007)
    • اشاعت : 2007

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے