شہر کا شہر بسا ہے مجھ میں

رئیس فروغ

شہر کا شہر بسا ہے مجھ میں

رئیس فروغ

MORE BY رئیس فروغ

    شہر کا شہر بسا ہے مجھ میں

    ایک صحرا بھی سجا ہے مجھ میں

    کئی دن سے کوئی آوارہ خیال

    راستہ بھول رہا ہے مجھ میں

    رات مہکی تو پھر آنکھیں مل کے

    کوئی سوتے سے اٹھا ہے مجھ میں

    دھوپ ہے اور بہت ہے لیکن

    چھاؤں اس سے بھی سوا ہے مجھ میں

    کب سے الجھے ہیں یہ چہروں کے ہجوم

    کون سا جال بچھا ہے مجھ میں

    کوئی عالم نہیں بنتا میرا

    رنگ خوشبو سے جدا ہے مجھ میں

    ایسا لگتا ہے کہ جیسے کوئی

    آئینہ ٹوٹ گیا ہے مجھ میں

    آتے جاتے رہے موسم کیا کیا

    جو فضا تھی وہ فضا ہے مجھ میں

    0
    COMMENT
    COMMENTS
    تبصرے دیکھیے

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed form your favorites