aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

کیا حقیقت کہوں کہ کیا ہے عشق

میر تقی میر

کیا حقیقت کہوں کہ کیا ہے عشق

میر تقی میر

MORE BYمیر تقی میر

    کیا حقیقت کہوں کہ کیا ہے عشق

    حق شناسوں کے ہاں خدا ہے عشق

    دل لگا ہو تو جی جہاں سے اٹھا

    موت کا نام پیار کا ہے عشق

    اور تدبیر کو نہیں کچھ دخل

    عشق کے درد کی دوا ہے عشق

    کیا ڈبایا محیط میں غم کے

    ہم نے جانا تھا آشنا ہے عشق

    عشق سے جا نہیں کوئی خالی

    دل سے لے عرش تک بھرا ہے عشق

    کوہ کن کیا پہاڑ کاٹے گا

    پردے میں زور آزما ہے عشق

    عشق ہے عشق کرنے والوں کو

    کیسا کیسا بہم کیا ہے عشق

    کون مقصد کو عشق بن پہنچا

    آرزو عشق مدعا ہے عشق

    میرؔ مرنا پڑے ہے خوباں پر

    عشق مت کر کہ بد بلا ہے عشق

    RECITATIONS

    فہد حسین

    فہد حسین,

    فہد حسین

    MEER TAQI MEER - KYA HAQEEQAT KAHUN KI فہد حسین

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے