ظاہر کي آنکھ سے نہ تماشا کرے کوئي

علامہ اقبال

ظاہر کي آنکھ سے نہ تماشا کرے کوئي

علامہ اقبال

MORE BYعلامہ اقبال

    دلچسپ معلومات

    حصہ اول : 1905 تک ( بانگ درا)

    ظاہر کي آنکھ سے نہ تماشا کرے کوئي

    ہو ديکھنا تو ديدہء دل وا کرے کوئي

    منصور کو ہوا لب گويا پيام موت

    اب کيا کسي کے عشق کا دعوي کرے کوئي

    ہو ديد کا جو شوق تو آنکھوں کو بند کر

    ہے ديکھنا يہي کہ نہ ديکھا کرے کوئي

    ميں انتہائے عشق ہوں ، تو انتہائے حسن

    ديکھے مجھے کہ تجھ کو تماشا کرے کوئي

    عذر آفرين جرم محبت ہے حسن دوست

    محشر ميں عذر تازہ نہ پيدا کرے کوئي

    چھپتي نہيں ہے يہ نگہ شوق ہم نشيں!

    پھر اور کس طرح انھيں ديکھا کر ے کوئي

    اڑ بيٹھے کيا سمجھ کے بھلا طور پر کليم

    طاقت ہو ديد کي تو تقاضا کرے کوئي

    نظارے کو يہ جنبش مژگاں بھي بار ہے

    نرگس کي آنکھ سے تجھے ديکھا کرے کوئي

    کھل جائيں ، کيا مزے ہيں تمنائے شوق ميں

    دو چار دن جو ميري تمنا کرے کوئي

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY