زیست کرنا در ادراک سے باہر ہے ابھی

عقیل عباس جعفری

زیست کرنا در ادراک سے باہر ہے ابھی

عقیل عباس جعفری

MORE BY عقیل عباس جعفری

    زیست کرنا در ادراک سے باہر ہے ابھی

    یہ ستارہ مرے افلاک سے باہر ہے ابھی

    ڈھونڈتے ہیں اسی نشے کو سبھی بادہ گسار

    ایک نشہ جو رگ تاک سے باہر ہے ابھی

    ایک ہی لمحے میں تسخیر کرے گی اسے آنکھ

    پر وہ لمحہ مرے افلاک سے باہر ہے ابھی

    کچھ مرے چاک گریباں کو خبر ہو شاید

    ایک گردش جو مرے چاک سے باہر ہے ابھی

    بس وہی اشک مرا حاصل گریہ ہے عقیلؔ

    جو مرے دیدۂ نمناک سے باہر ہے ابھی

    مآخذ:

    • Book: Urdu Quarterly BADBAAN (Pg. 205)
    • Author: Nasir Bagdadi
    • مطبع: E-2, 8/14, Mayar Square, Block No.14 Gulshane-e-Iqbal (Oct. - Dec. 2002,Issue No 8)
    • اشاعت: Oct. - Dec. 2002,Issue No 8

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites