Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

لندن میں جشن غالب

دلاور فگار

لندن میں جشن غالب

دلاور فگار

MORE BYدلاور فگار

    لندن میں جشن حضرت غالبؔ کی رات تھی

    تاریخ شاعری میں یہ اک واردات تھی

    اس جشن میں شریک تھے ہر ملک کے وفود

    حل ہو گیا تھا مسئلہ وحدت الوجود

    جنت سے میرزا کو جو کنکارڈ لے چلا

    پر ہو گیا سفر سے جو تھا راہ میں خلا

    مرزا کے پاس باکس میں تمباکو تھی فقط

    کسٹم کے افسروں نے اسے سمجھا ہی غلط

    افسر نے پاسپورٹ جو ان سے طلب کیا

    کہنے لگے کہ آپ نے یہ کیا غضب کیا

    سچ بات تو یہی ہے وہ اب نیک ہو کہ بد

    ملکوں کی سرحدوں کو نہیں مانتے اسدؔ

    تاریخ کی ہے فکر نہ جغرافیے کی ہے

    شاعر ہوں میں تلاش مجھے قافیے کی ہے

    عام آدمی کی طرح مرا پاسپورٹ کیوں

    ''میں عندلیب گلشن نا آفریدہ ہوں''

    میں کب یہاں مکان بنانے کو آیا ہوں

    لندن میں اپنا جشن منانے کو آیا ہوں

    انگریز کے قصیدے جو لکھے تھے یاد ہیں

    نظمیں کچھ اور بھی ہیں جو محتاج داد ہیں

    مجھ کو نمود و نام کی پروا نہیں مگر

    بلوایا بی بی سی نے تو پہنچوں گا وقت پر

    غالبؔ جو ریسٹوران میں پہنچے بہ وقت شام

    بیرے سے یہ کہا کہ کرو میرا انتظام

    منگواؤ وہ جو آتش سیال پاس ہے

    ''اس بلغمی مزاج کو گرمی ہی راس ہے''

    اسٹیج پر جو ہو گئے اب جلوہ گر اسد

    استاد ذوقؔ جلنے لگے ازرہ حسد

    ناظم مشاعرے کا یہ بولا کہ حاضرین

    غالبؔ کو دیکھنے کو نہ آئیں تماش بین

    غالبؔ کی شخصیت میں محاسن ہیں بے شمار

    یہ آدمی ولی تھا نہ ہوتا جو بادہ خوار

    یہ شخص جس کو وقت نے بوڑھا بنایا ہے

    ہم نے اسے برات کا دولہا بنایا ہے

    بیوی سے بات کیجے نہ سالی سے پوچھئے

    غالبؔ کا کیا مقام ہے حالی سے پوچھئے

    صحت سے کم نہیں ہے اسے بہرا پن کا روگ

    بہرا جو اس کو کہتے ہیں بے بہرہ ہیں وہ لوگ

    بے تیغ کیوں لڑے گا یہ شاعر جو ہے جری

    سو پشت سے ہے پیشۂ آبا سپہ گری

    یہ چاہتا ہے گھر میں تری جلوہ گاہ ہو

    ''دیکھو اسے جو دیدۂ عبرت نگاہ ہو''

    تہذیب و فن کو رنگ مغل اس نے دے دیا

    اردو کو ایک تاج محل اس نے دے دیا

    اس نے زبان میرؔ کو ہندی کا رس دیا

    اردو غزل کو اس نے نیا کینوس دیا

    غالبؔ جو اپنے جشن میں بیٹھے ہیں شان سے

    ان کا کلام سنئے اب ان کی زبان سے

    غالبؔ نے تیس غزلیں سنائیں جو صبح تک

    ہر شعر نوٹ کرتا رہا منشئ فلک

    تقریب جب یہ ختم ہوئی صبح کے قریب

    اسٹیج کو جو دیکھا تو غائب تھے سب ادیب

    جلسہ میں مہتمم کا بھی کوئی پتہ نہ تھا

    دریاں تھیں گاؤ تکیے تھے اور شامیانہ تھا

    کیا پوچھتے ہو حال جو غالبؔ کا آج تھا

    پاکٹ میں ایک پیسہ نہ تھا سر پہ تاج تھا

    مأخذ :
    • کتاب : Feesabilillah (Pg. 147)
    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے