Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

گلزار وطن

سرور جہاں آبادی

گلزار وطن

سرور جہاں آبادی

MORE BYسرور جہاں آبادی

    پھولوں کا کنج دل کش بھارت میں اک بنائیں

    حب وطن کے پودے اس میں نئے لگائیں

    پھولوں میں جس چمن کے ہو بوئے جاں نثاری

    حب وطن کی قلمیں ہم اس چمن سے لائیں

    خون جگر سے سینچیں ہر نخل آرزو کو

    اشکوں سے بیل بوٹوں کی آبرو بڑھائیں

    ایک ایک گل میں پھونکیں روح شمیم وحدت

    اک اک کلی کو دل کے دامن سے دیں ہوائیں

    فردوس کا نمونہ اپنا ہو کنج دل کش

    سارے جہاں کی جس میں ہوں جلوہ گر فضائیں

    چھایا ہو ابر رحمت کاشانۂ چمن میں

    رم جھم برس رہی ہوں چاروں طرف گھٹائیں

    مرغان باغ بن کر اڑتے پھریں ہوا میں

    نغمے ہوں روح افزا اور دل ربا صدائیں

    حب وطن کے لب پر ہوں جاں فزا ترانے

    شاخوں پہ گیت گائیں پھولوں پہ چہچہائیں

    چھائی ہوئی گھٹا ہو موسم طرب فزا ہو

    جھونکے چلیں ہوا کے اشجار لہلہائیں

    اس کنج دل نشیں میں قبضہ نہ ہو خزاں کا

    جو ہو گلوں کا تختہ تختہ ہو اک جناں کا

    بلبل کو ہو چمن میں صیاد کا نہ کھٹکا

    خوش خوش ہو شاخ گل پر غم ہو نہ آشیاں کا

    حب وطن کا مل کر سب ایک راگ گائیں

    لہجہ جدا ہو گرچہ مرغان نغمہ خواں کا

    ایک ایک لفظ میں ہو تاثیر بوئے الفت

    انداز دل نشیں ہو ایک ایک داستاں کا

    مرغان باغ کا ہو اس شاخ پر نشیمن

    پہنچے نہ ہاتھ جس تک صیاد آسماں کا

    موسم ہو جوش گل کا اور دن بہار کے ہوں

    عالم عجیب دل کش ہو اپنے گلستاں کا

    مل مل کے ہم ترانے حب وطن کے گائیں

    بلبل ہیں جس چمن کے گیت اس چمن کے گائیں

    مأخذ :
    • کتاب : Azadi Ki Nazmein (Pg. 28)
    • Author : Sibte Hasan
    • مطبع : National Council For Promotion Of Urdu Language (1985,2007)
    • اشاعت : 1985,2007
    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے