میں پل دو پل کا شاعر ہوں

ساحر لدھیانوی

میں پل دو پل کا شاعر ہوں

ساحر لدھیانوی

MORE BY ساحر لدھیانوی

    میں پل دو پل کا شاعر ہوں پل دو پل مری کہانی ہے

    پل دو پل میری ہستی ہے پل دو پل مری جوانی ہے

    مجھ سے پہلے کتنے شاعر آئے اور آ کر چلے گئے

    کچھ آہیں بھر کر لوٹ گئے کچھ نغمے گا کر چلے گئے

    وہ بھی اک پل کا قصہ تھے میں بھی اک پل کا قصہ ہوں

    کل تم سے جدا ہو جاؤں گا گو آج تمہارا حصہ ہوں

    پل دو پل میں کچھ کہہ پایا اتنی ہی سعادت کافی ہے

    پل دو پل تم نے مجھ کو سنا اتنی ہی عنایت کافی ہے

    کل اور آئیں گے نغموں کی کھلتی کلیاں چننے والے

    مجھ سے بہتر کہنے والے تم سے بہتر سننے والے

    ہر نسل اک فصل ہے دھرتی کی آج اگتی ہے کل کٹتی ہے

    جیون وہ مہنگی مدرا ہے جو قطرہ قطرہ بٹتی ہے

    ساگر سے ابھری لہر ہوں میں ساگر میں پھر کھو جاؤں گا

    مٹی کی روح کا سپنا ہوں مٹی میں پھر سو جاؤں گا

    کل کوئی مجھ کو یاد کرے کیوں کوئی مجھ کو یاد کرے

    مصروف زمانہ میرے لیے کیوں وقت اپنا برباد کرے

    مآخذ:

    • کتاب : Kulliyat-e-Sahir (Pg. 246)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY