بیوی کی اماں

حماد حسن

بیوی کی اماں

حماد حسن

MORE BYحماد حسن

    تری ماں اگر نہ ہوتی تو مجھے قرار ہوتا

    نہ وہ آتی میرے گھر میں نہ میں زیر بار ہوتا

    ذرا دیکھ اس کے نخرے نہیں کھاتی دال روٹی

    میں کھلاتا اس کو صدقہ جو یہاں مزار ہوتا

    تو اسے کھلائے مرغی اور کھلائے روسٹ مچھلی

    میں اسے زہر کھلاتا اگر اختیار ہوتا

    مرے گھر میں آ کے رہنے کی سزا میں اس کو دیتا

    کبھی ڈاکٹر نہ لاتا جو اسے بخار ہوتا

    تری ماں نے مجھ کو کوسا ترے باپ نے بھی ڈانٹا

    نہ میں تیرے گھر میں آتا نہ ذلیل و خوار ہوتا

    مجھے صرف دال دے دی جو بگھاری بھی نہیں تھی

    میں تو وہ بھی کھا ہی لیتا جو وہاں اچار ہوتا

    بنے ہم جو تیرے دولہا پڑا جھونکنا یہ چولہا

    نہ نکاح تجھ سے کرتے نہ یہ حال زار ہوتا

    مأخذ :

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے