aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

دی گئی ہے

MORE BYغوث خواہ مخواہ حیدرآبادی

    ہمیں جو زندگانی دی گئی ہے

    برائے مہربانی دی گئی ہے

    سماعت چھین کر اہل خرد کی

    ہمیں جادو بیانی دی گئی ہے

    مجھے لکھنے کو اک اچھا سا عنواں

    مری اپنی کہانی دی گئی ہے

    جو راہ حق میں جاں دیتے ہیں ان کو

    حیات جاودانی دی گئی ہے

    مگر جو موت سے ڈرتے ہیں ان کو

    وفات ناگہانی دی گئی ہے

    ضعیفی میں جوانی دی گئی ہے

    گھڑی اک امتحانی دی گئی ہے

    جوانوں کو جو تحفے میں ملی ہے

    ہمیں وہ منہ زبانی دی گئی ہے

    بدل دی ہے کسی نے شیروانی

    نئی لے کر پرانی دی گئی ہے

    جوانوں کو مبارک ہو جوانی

    ہمیں تو نوجوانی دی گئی ہے

    لگائیں گے وہ آگ اب بھاشنوں سے

    جنہیں جادو بیانی دی گئی ہے

    دوانہ ؔخواہ مخواہ بنتا نہ کیسے

    نکاح میں اک دوانی دی گئی ہے

    مأخذ:

    بہ فرض محال (Pg. 56)

    • مصنف: غوث خواہ مخواہ حیدرآبادی
      • ناشر: قلم پبلی کیشنز، ممبئی
      • سن اشاعت: 1992

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے