اب اس سادہ کہانی کو نیا اک موڑ دینا تھا

انجم عرفانی

اب اس سادہ کہانی کو نیا اک موڑ دینا تھا

انجم عرفانی

MORE BYانجم عرفانی

    اب اس سادہ کہانی کو نیا اک موڑ دینا تھا

    ذرا سی بات پر عہد وفا ہی توڑ دینا تھا

    مہکتا تھا بدن ہر وقت جس کے لمس خوشبو سے

    وہی گلدستہ دہلیز خزاں پر چھوڑ دینا تھا

    شکست ساز دل کا عمر بھر ماتم بھی کیا کرتے

    کہ اک دن ہنستے ہنستے ساز جاں ہی توڑ دینا تھا

    سفر میں ہر قدم رہ رہ کے یہ تکلیف ہی دیتے

    بہر صورت ہمیں ان آبلوں کو پھوڑ دینا تھا

    غلط فہمی کے جھونکوں سے بکھر کر رہ گئے آخر

    لہو کی آنچ میں ٹوٹے دلوں کو جوڑ دینا تھا

    وہ جس پہ ذکر ہے قول و قسم اور عہد و پیماں کا

    کتاب زندگی کے اس ورق کو موڑ دینا تھا

    بنایا ہی نہیں ہم نے کبھی یہ سوچ کر انجمؔ

    کہ گوتم کی طرح اک دن ہمیں گھر چھوڑ دینا تھا

    مأخذ :
    • کتاب : zubaan-e-zakham (Pg. 37)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY